زعمِ پارسائی (حصہ دوم)

                خوش فہمی ، خود بینی اور تعلّی انسان کو حقیقت پسندی سے دور کردیتی ہے ، ایسے لوگ خوابوں کی دنیا میں رہنا پسند کرتے ہیں ، اپنے لیے بھی مدح وستائش کو پسند کرتے ہیں اور خود بھی اپنے ولیِ نعمت کی چاپلوسی کو اپنے لیے اعزاز سمجھتے ہیں ، جھوٹ بولتے ہیں اور اپنے ممدوح کے کانوں میں جھوٹ ہی کا رس گھولتے ہیں ، چنانچہ فواد چودھری نے یہ نیا فلسفہ تراشا :’’موٹر سائیکل کی خریداری میں اضافہ عوام کے تَمَوُّل (Richness) کی علامت ہے‘‘، یہی وجہ ہے کہ وزیر اعظم اور اُن کے حواریوں نے موٹر سائیکل اور کاروں کی فروخت کو عوام کے خوشحال ہونے کی دلیل بنادیا ۔ جبکہ زمینی صورتِ حال یہ ہے :’’بیسویں صدی کے پانچویں، چھٹے ، ساتویں اور آٹھویں عشرے تک اخبار فروش ، دودھ فروش اور چھوٹا موٹا سامان ڈھونے والے سائیکل استعمال کرتے تھے اوربعض اوقات سائیکل کے پیچھے ایک پہیوں والا ریڑھا بھی جُڑا ہوتا تھا ۔مگر اب ان تمام کاموں کے لیے موٹر سائیکل استعمال ہورہا ہے، دیہاتوں اور کراچی جیسے شہر میں بھی موٹر سائیکل کرائے کی سواری کے طور پر بھی استعمال ہوتا ہے اور اس کے لیے باقاعدہ ’’بائیکیا(Bykea)‘‘کمپنی بھی موجود ہے ۔ پہلے کراچی میں دھوبی حضرات گھروں سے کپڑے جمع کرنے ،پھر دھوکر اور استری کر کے واپس گاہکوں کے گھروں میں  پہنچانے کے لیے گدھاگاڑی استعمال کرتے تھے، مگر اب ان جیسے دیگر کاموں کے لیے ’’موٹر سائیکل ڈالا‘‘ استعمال ہورہا ہے۔

                 سبزی منڈی ،فروٹ منڈی اورتمام ہول سیل مارکیٹوں میں نقل وحمل کے لیے اس کا استعمال عام ہے ،شہروں میں پرانے رکشے بتدریج غائب ہورہے ہیں اور ان کی جگہ موٹر سائیکل رکشے لے رہے ہیں، کیونکہ ان میں زیادہ آدمیوں کی گنجائش ہوتی ہے ، غریب آدمی آنے جانے اور تقریبات میں شرکت کے لیے اپنی پوری فیملی کو موٹر سائیکل پر لاد دیتا ہے، ڈرائیور کے علاوہ دو دو اورتین تین سواریاں بھی نظر آجائیں گی ، سو اب موٹر سائیکل تعیّش یا تموّل کی علامت نہیں ہے، بلکہ اکثر صورتوں میںبنیادی ضرورت میں شامل ہے۔ کیونکہ زیریں متوسط طبقے کے لوگ اب  ٹیکسی کا کرایہ ادا کرنے کے متحمل نہیں رہے ، چھوٹی کاروں کی کثرت بھی اسی لیے ہے کہ ڈھائی کروڑ کی آبادی پر مشتمل کراچی جیسے صنعتی اور تجارتی شہر میں کوئی باوقار پبلک ٹرانسپورٹ نہیں ہے اور لوگوں کے پاس متبادل آپشن بھی نہیں ہے ، لیکن حیرت ہے کہ وزیر اعظم اور فواد چودھری کے نزدیک موٹرسائیکل کی فروخت تموّل کی علامت ہے۔

                 یورپ اورمغرب میں آبادی کی ایک معتَد بہ تعداد حکومت کی طرف سے سوشل کیئر سسٹم کے تحت گزارا کر رہی ہے ، اُن کی مقامی حکومتیں انھیں مفت مکان بھی فراہم کرتی ہیں اور گزر اوقات کے لیے ہفتہ وار وظیفہ بھی دیتی ہیں ۔ کار ،ٹیلی ویژن ،ریفریجریٹر ، ڈیپ فریزر ، واشنگ مشین ، مرکزی حرارتی نظام سے آراستہ مکان اور ہیلتھ انشورنس بھی اُن کو دستیاب ہے،اوباما ہیلتھ کیئر کا سب کو علم ہے، لیکن اُن کی حکومت یہ نہیں کہتی کہ تم نے کار رکھی ہوئی ہے ،تم تو مالدار ہو، لہٰذا سوشل کیئر سسٹم سے تمہارا نام خارج کیا جارہا ہے، سو حکمرانوں کو ہمارا مشورہ ہے :’’الحذر ! اے چیرہ دستاں !سخت ہیں فطرت کی تعزیریں‘‘۔

                1990تک خال خال لوگوں کے پاس لینڈ لائن ٹیلی فون ہوتے تھے، نواز شریف صاحب نے اپنے پہلے دورِ حکومت میں اسے عام کیا، اسی طرح پاسپورٹ بھی رئیس یا بارسوخ ہونے کی علامت تھی، عام آدمی کو دستیاب نہیں تھا، پہلی مرتبہ اسے ذوالفقار علی بھٹو مرحوم نے عام کیا اور غریب عوام کے لیے سعودی عرب ،کویت اور امارات وغیرہ میں روزگار کے مواقع پیدا ہوئے۔فواد چودھری جیسے لوگ عوام کو خس وخاشاک نہ سمجھتے اور زمین کی مخلوق کا حصہ سمجھ رہے ہوتے تو انھیں پاکستان کی تاریخ ، معاشی ارتقاء اور معاشرتی بُنَت (Fabrication) کا پتا ہوتا، مگر کیا کیجیے ! حکومت میں شیخ رشید تو ہے ،مگر کوئی ’’رَجُلِ رشید‘‘ نہیں ہے، اگر ایسا ہوتا تو وزیر اعظم اور وزراء عوام کا اس طرح مذاق نہ اڑاتے ۔ اس لیے ہم نے لکھا تھا: ’’ معاش اور معاشرت کی جو چیزیں کبھی آسائش اور تعیّش کے درجے میں ہوتی تھیں، وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ وہ ضرورت میں بدل جاتی ہیں ‘‘۔ماضی میں لوگ گیس کے بغیر بھی گزارا کرتے رہے ہیں،لیکن اب ایسا ممکن نہیں ہے ، وقت کا پہیہ الٹا نہیں گھوم سکتا کہ لوگ پھر لکڑی اور کوئلے کے ایندھن اور مٹی کے تیل کے چولہوں کی طرف واپس پلٹ جائیں ، اب توشاید لکڑی گیس سے بھی مہنگی دستیاب ہو، اب کچن پرانے طرز کے نہیں رہے ۔

                حقیقت پسندی سے گریز کا نتیجہ ہے کہ حکومت کو ترجمانوں کا لشکرِ جرّار پالنا پڑ رہا ہے، وزیرِ اعظم کی مصروفیات میں ترجیحِ اول روزانہ یا ایک آدھ دن کے وقفے سے ترجمانوں کے اجلاس ہیں ،ترجمانوں کی اتنی افراط ہم نے دنیا کے کسی جمہوری ملک میں نہیں دیکھی۔ خیبرپختونخوا کے سترہ اضلاع میں مقامی انتخابات میں عبرت ناک شکست کے بعد عقل مندی کا تقاضا تھا کہ حکومتی جماعت اپنی شکست کا بھونڈا جواز پیش کرنے کے بجائے حقیقت پسندی کے ساتھ اس کا تجزیہ کرتی ، اپنی غلطیوں کا اعتراف کرتی اور ان کے ازالے کی تدبیر کرتی ، عوام دشمن ناکام پالیسیوں کو بدلنے کا سوچتی ،لیکن اس مسئلے پر بھی ہمیں سنجیدگی نظر نہیں آئی ، وہی روایتی کھلنڈرا پن نظر آرہا ہے، چنانچہ اب میڈیا سے معلوم ہوا :’’وزیر اعظم نے اپنی حکمراں جماعت پاکستان تحریک انصاف کی’’ تنظیم نو‘‘کردی ہے، آئیے! دیکھیں اس کی حقیقت کیا ہے:

                ’’نو‘‘اگر فارسی لفظ ہے تو اس کے معنی ہیں:’’نئی‘‘ ، مگر اس میں نیا پن کچھ بھی نہیں ہے، سب پرانے دیکھے بھالے چہرے ہیں ، اس معنی میں اس پر’’تنظیم نو‘‘ کا اطلاق سجتا نہیں ہے، البتہ اسے ’’ترتیبِ نو‘‘ کہہ سکتے ہیں، لیکن ’’ترتیبِ نو ‘‘کہنا بھی زیادہ نہیں جچتا، کیونکہ اسد عمر صاحب پہلے بھی پارٹی کے جنرل سیکرٹری رہ چکے ہیں اور اگر تنظیمِ نو میں’’نو‘‘سے مراد انگریزی لفظ ’’No‘‘ہے، تو معنوی اعتبار سے درست قرار پائے گا، علامہ اقبال نے کہا ہے:

آئینِ نو سے ڈرنا، طرزِ کُہن پہ اَڑنا                 منزل یہی کٹھن ہے قوموں کی زندگی میں

                ترجمہ:’’ پرانی طرز پر جمے رہنا اور حقیقی اور معنوی تبدیلی سے گھبرانا ،قوموں کی زندگی میں یہی مرحلہ مشکل ہوتا ہے‘‘۔اس پر فارسی کا یہ محاورہ صادق آتا ہے: ’’ہرکہ درکانِ نمک رفت، نمک شد‘‘، یعنی جو نمک کی کان میں گیا، وہ بھی پگھل کر نمک بن گیا‘‘۔ فقہاء نے کہا ہے:’’ اگر گدھا نمک کی کان میں گر جائے اور اس کا جسم گلنے کے سبب پانی ہوکر کان میں جذب ہوجائے ، تو اس کی ماہیت بدل جاتی ہے اور حرمت کا حکم باقی نہیں رہتا‘‘۔ سو خان صاحب جس طرح دوسری سیاسی جماعتوں مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی وغیرہ پر الزام لگاتے تھے کہ ان کی تنظیمیں جعلی ہیں ، قائدین کے من پسند لوگ عہدوں پر فائز کیے جاتے ہیں ، کسی انتخابی عمل سے گزر کر عہدیدار نہیں بنتے، پس اب پی ٹی آئی بھی اسی صف میں شامل ہے۔

                کافی وقفے کے بعد شیخ رشید صاحب بولے :’’ہمارے سر سے ہاتھ نہیں اٹھا‘‘، موصوف کے ان فرمودات کے ’’بینَ السطور‘‘یہ پیغام پوشیدہ ہے کہ سر پر دستِ شفقت کے بغیر حکومت کے توتے کی جان نکل جاتی ہے، یہی وجہ ہے کہ چند دن پہلے مایوسی کا مظہر یہ بیان جاری ہوا تھا:’’سزایافتہ لوگوں کے دوبارہ اقتدار میں آنے کے لیے راستہ ہموار کیا جارہا ہے‘‘، اسی کی بنیاد پر تجزیہ نگاروں نے رونقیں لگائیں کہ کچھ نہ کچھ ہورہا ہے، مگر جو کچھ بھی ہورہا ہے ، زیرِ زمیں ہورہا ہے، برسرِ زمیں ہمیں صرف حکومتی زعماء کے چہروںکی پژمردگی اوراپوزیشن کے چہروں کی رونقیں نظر آرہی ہیں ، علامہ اقبال بہت پہلے کہہ چکے ہیں:

اس کھیل میں تعیینِ مراتب ہے ضروری

شاطر کی عنایت سے تو فرزیں، میں پیادہ

بیچارہ پیادہ تو ہے، اِک مہرۂ ناچیز

فرزیں سے بھی پوشیدہ ہے، شاطر کا ارادہ!

                حکومتِ وقت کا ایک اوربیّن تضاد یہ ہے :’’وزیر اعظم بزعمِ خویش ’’ریاستِ مدینہ‘‘ قائم کرنے کے دعویدار ہیں اور خود کو اُس کا آئیڈیل بناکر پیش کر رہے ہیں ،جبکہ حکومت کے ترجمان اورزبان یعنی وزیرِ اطلاعات فواد چودھری ببانگ دہل سیکولرازم اور لبرل ازم کے مدعی ہیں ، اسلام اور اہلِ دین سے بے حد بے زار ہیں ،اپنی نفرت کے اظہار کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے، پس وزیر اعظم کو چاہیے کہ اپنی خود ساختہ’’ ریاستِ مدینہ ‘‘کے پنجرے سے فواد چودھری کو آزاد کریں اور اسے موقع دیں کہ اپنی لبرل سیکولرجماعت بناکر میدان میں آئیں،پھرآٹے دال کا بھائو معلوم ہوجائے گا، رئیس فروغ نے کہا ہے:

ہرا سمندر گوپی چندر

بول میری مچھلی، کتنا پانی

                علامہ اقبال نے ذہنی اور فکری آزادی اور محکومی کا تقابل ان اشعار میں پیش کیا ہے:

                رِندوں کو بھی معلوم ہیں صوفی کے کمالات٭ہرچند کہ مشہور نہیں اُن کی کرامات٭خود گیری وخودداری وگلبانگِ اَنا الحق               ٭

   آزاد ہوسالک ،تو ہیں یہ اس کے مقامات٭محکوم ہو سالک ،تو یہی اُس کا ہمہ اُوست٭خود مُردہ وخود مَرقد وخود مرگِ مفاجات

                پس آپ سوچ سکتے ہیں کہ آج کل ہمارے محکوم مزاج سیاست دانوں کے لیے ’’ہمہ اُوست‘‘ کون ہے، آصف علی زرداری صاحب کے عہدِ صدارت میں ’’آج گئے کہ کل گئے‘‘کرتے کرتے حکومت نے پانچ سال گزار ہی لیے تھے ، لگتا ہے کہ موجودہ حکومت  بھی اسی انداز میں پانچ سال گزارلے گی ،کیونکہ سیاست ’’بیم ورجا‘‘ کا نام ہے، اگر امید کا دامن ہاتھ سے چھوڑ دیا جائے تو پھر  ’’مرگِ مفاجات‘‘ کے لیے تیار رہنا پڑتا ہے۔الغرض اس امید پر کہ شایدعالَم غیب سے کوئی مدد آپہنچے اور اقتدار کا ہما سر پر آبیٹھے،سیاست میں امکانات کے دروازے ہمیشہ کھلے رکھنے پڑتے ہیں ،اسی لیے تو کہتے ہیں :’’امید پر دنیا قائم ہے‘‘۔

View : 74

7 thoughts on “زعمِ پارسائی (حصہ دوم)”

  1. I don’t need to tell you how important it is to optimize every step in your SEO pipeline. But unfortunately, it’s nearly impossible to cut out time or money when it comes to getting good content. At least that’s what I thought until I came across Article Forge… Built by a team of AI researchers from MIT, Carnegie Mellon, Harvard, Article Forge is an artificial intelligence (AI) powered content writer that uses deep learning models to write entire articles about any topic in less than 60 seconds. Their team trained AI models on millions of articles to teach Article Forge how to draw connections between topics so that each article it writes is relevant, interesting and useful. All their hard work means you just enter a few keywords and Article Forge will write a complete article from scratch making sure every thought flows naturally into the next, resulting in readable, high quality, and unique content. Put simply, this is a secret weapon for anyone who needs content. I get how impossible that sounds so you need to see how Article Forge writes a complete article in less than 60 seconds! order here.

  2. Use artificial intelligence to cut turnaround time, extend your budget, and create more high-quality content that Google and readers will love. How It Works? WordAi is extremely fast and intuitive. Just enter your content, click rewrite, and in a matter of seconds, WordAi will rewrite an entire piece of content for you. WordAi comes up with different ways to express the same ideas by rewriting every sentence from scratch. This not only removes duplicate content, it also makes the rewritten content read completely naturally. Scale Your Business Make your entire content production process 10x more efficient. Use AI to create more high-quality, unique content that impresses clients and engages readers, all without having to put in more hours Register here and get a bonus.

  3. I was extremely pleased to discover this page. I want to to thank you for ones time due to this wonderful read!! I definitely appreciated every part of it and I have you bookmarked to look at new information on your web site.

Leave a Comment

Your email address will not be published.