پاکستانی تارکین وطن

                یہ ایک اَفسُوں ہے ، Mythہے ، مفروضہ اور تاثّر ہے کہ پاکستان کو بیرونِ ملک مقیم پاکستانی تارکینِ وطن چلاتے ہیں، یہ تاثر خاص طور پرجنابِ عمران خان ایک عشرے سے چلا رہے ہیں۔اُن کے شوکت خانم ہاسپیٹل یا نمل یونیورسٹی کے بارے میں یہ کہنا کافی حد تک بجا ہوگا کہ اُن کو زیادہ عطیات باہر سے آتے ہیں، لیکن بیرونِ ملک مقیم پاکستانی تارکینِ وطن پاکستان میں کوئی ٹیکس ادا نہیں کرتے، بلکہ ہمارے ملک کا قانون یہ ہے کہ جو پاکستانی چھ ماہ یا اُس سے زائد بیرونِ ملک رہے ، اس پر بھی پاکستان میں ٹیکس عائد نہیں ہوتا۔ لہٰذا پاکستان کے محصولات اوربجٹ آمدنی میں بیرونِ ملک پاکستانیوں کا کوئی حصہ شامل نہیں ہوتا۔البتہ وہ پاکستان میں مقیم اپنے خاندانوں کی کفالت یا دینی ور فاہی اداروں اور اپنے آبائی علاقوں میں مستحقین کی مدد کے لیے رقوم بھیجتے ہیں، یہ اُن کی ایک قابلِ قدر خدمت ہے اورہم اس کی تحسین کرتے ہیں ۔ لیکن یہ رقم اُن مقاصد پر خرچ ہوتی ہے جن کے لیے وہ بھیجتے ہیں،یہ پاکستان کی قومی آمدنی کا حصہ نہیں ہوتی ، تاہم اس سے پاکستان کو زرِ مبادلہ کی صورت میں معتد بہ سہارا مل جاتا ہے اور اس کے لیے ہمیں ان کا شکر گزار ہونا چاہیے، کیونکہ پاکستان ہمیشہ زرمبادلہ کے بحران سے دوچار رہتا ہے۔

                جن پاکستانی تارکین وطن نے برطانیہ ، یورپ، امریکہ ، کینیڈا ، آسٹریلیا اوردیگر ممالک کی شہریت اختیار کرلی ہے ، اُن کا اور اُن کی اولادکا مستقبل انھی ممالک سے وابستہ ہے، البتہ اُن میں سے باوسائل لوگ اپنے نام ونمود اور کرّوفر کے لیے پاکستان کے بڑے شہروں یااپنے آبائی علاقوں میں عالی شان مکانات بنالیتے ہیں اور جائدادیںخرید لیتے ہیں۔ اس کے علاوہ پاکستان سے اُن کاتعلق شوقیہ یا فطری ہوتا ہے، وہ پاکستانی میڈیا کو دیکھتے ہیں اور اس سے پاکستان کے بارے میں رائے قائم کرتے ہیں، اُن کا پاکستان اور پاکستانیوں کے حقیقی مسائل سے کوئی تعلق نہیں ہوتا۔

                یہ بھی ہمارے ہاں فیشن بن چکا ہے کہ جس ملک میں پاکستانیوں کی ایک معتَد بہ تعداد موجودہوتی ہے ،وہاں پاکستان کی ہر سیاسی اور مذہبی جماعت کی ایک ذیلی تنظیم کا قیام بھی ضروری سمجھاجاتاہے ،اپنی جماعتوں کے قائدین سے اندھی عقیدت اور دوسروں سے بے پناہ نفرت وعداوت بھی وراثت کے طور پر انھیں منتقل ہوتی ہے۔اس سے وہاں بھی پاکستانیوں کے درمیان باہمی نفرت، تفریق اورانتشار کے بیج بوئے جاتے ہیں ،اس کی بنا پر وہ وہاں کی سوسائٹی اور سیاست میں مؤثر کردار ادا نہیں کرسکتے۔ اس کے برعکس بھارتی تارکین وطن وہاں کی سیاست ،معاشرت اور معیشت میں مؤثر کردار اداکرتے ہیں، آج بھی امریکہ کی تین بڑی آئی ٹی کمپنیوں کے چیف ایگزیکٹیوبھارتی نژاد ہیں ۔ برطانیہ میں بالفرض اگر بورس جانسن وزیر اعظم کی حیثیت سے اپنی پارٹی کا اعتماد کھوبیٹھتے ہیں ، تو کنزرویٹیو پارٹی میں تین متبادل افراد جواُن کی جگہ لینے کی پوزیشن میں ہیں، ان میں سے ایک بھارتی نژاد ہے۔

                یہ ہمارا ایسا ہی تضاد ہے کہ ہم نے آزاد کشمیراسمبلی میں پاکستان بھر میں پھیلے ہوئے کشمیری مہاجرین کی بارہ نشستیں رکھی ہوئی ہیں،وہ یہاں سے منتخب ہوکر جاتے ہیں اور آزاد کشمیر کی حکومت بنانے اور بگاڑنے میں مؤثر کردار ادا کرتے ہیں، ان میں سے بعض کشمیر میں وزارتوں پربھی براجماں ہوتے ہیں، حالانکہ وہ پاکستان میں اپنے اپنے علاقوں میں مستقل طور پر آباد ہیں، اُن کی رشتہ داریاں ، کاروبار اور روزگار بھی وہیں ہیں،آزاد کشمیر کے مستقل باشندوں اور ان کے مسائل سے ان کا کوئی لینا دینا نہیں ہوتا، لیکن وہ وہاں کے اکثریتی نتائج کو بدل سکتے ہیں ۔ یہ غیر منصفانہ بات ہے، آزاد کشمیر میں حکومت بنانے کا حق انھی کو حاصل ہونا چاہیے جو وہاں مستقل طور پر قیام پذیر ہیں، جن کا جینا مرنا وہیں ہے، جن کا کاروبار اور روزگار وہیں ہے، جن کے آباواجداد کے آثار وہیں ہیں۔ اب اگر وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کے بیان کو درست مان لیا جائے کہ بیرونِ ملک پاکستانی تارکین وطن پاکستان میں قومی اسمبلی کی اسّی نشستوں کے نتائج کو بدل سکتے ہیں ، تویہ پاکستان کے مستقل رہائشی باشندوں کی واضح حق تلفی ہے کہ وہ کچھ اور فیصلہ کریں اور بیرونِ ملک رہنے والے تارکینِ وطن ان کے فیصلے کو بدل کر رکھ دیں، گویا پاکستانی سیاست وحکومت بازیچۂ اطفال بن کر رہ جائے گی۔

                یہ سوچ بھی غلط ہے کہ بیرونِ ملک رہنے والے پاکستانی تارکینِ وطن کی ذہنی سطح بلند ہوتی ہے ، وہ زیادہ پابندِ آئین وقانون اور جمہوری سوچ کے حامل ہوتے ہیں،ایسا ہرگز نہیں ہے۔ ہم نے دیکھا ہے کہ تین چار نسلیں گزرنے کے باوجود اُن کی سوچ اور رویوں میں کوئی فکری بلندی نظرنہیں آتی،وہاں اُن کا پابندِ آئین وقانون ہونا اُس نظام کا مرہونِ منّت ہے۔اس کی ایک مثال گورنر پنجاب چودھری محمد سرور کو لے لیجیے، وہ برٹش پارلیمنٹ کے رکن رہے ، لیکن آئین وقانون سے ان کی کوئی ذہنی مناسبت پیدا نہ ہوسکی۔ انھوں نے نواز شریف صاحب سے دوستی کا رشتہ قائم کیا اورنواز شریف صاحب نے انعام کے طور پرانھیں پنجاب کا گورنر بنادیا۔ گورنر ہائوس میں کچھ عرصہ براجماں رہنے کے بعد اچانک ان پر آشکار ہوا کہ وہ اِس منصب پر بیٹھ کر بے اثر و بے اختیار ہیں اور کوئی مثبت کردار ادا کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں۔ پھر انھوں نے مسلم لیگ ن سے وفا کا رشتہ توڑا، جنابِ عمران خان سے تانے بانے ملائے اورگورنرکے عہدے سے مستعفی ہوکر پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کرلی ، پی ٹی آئی نے پہلے انھیں سینیٹر بنایا ، مگر پھر استعفیٰ لے کر دوبارہ گورنر پنجاب لگادیا، اب ایک بار پھر انھوں نے ماضی کے تجربے کو دہرانا شروع کیا ہے کہ اچانک ان پر آشکار ہوا کہ وہ بے اثر ہیں ، عضو معطّل ہیں، کچھ کردار ادا کرنے اور فیض رسانی کے قابل نہیں ہیں، لہٰذااب وہ نئے امکانات کی تلاش میں ہیں۔

                پس سوال یہ ہے کہ پہلی بار گورنر بنتے وقت انھوں نے پاکستان کے دستور کا مطالعہ نہیں کیا تھا، انھیں پاکستان کے دستور میں درج گورنر کے آئینی وقانونی اختیارات اوردائرۂ کار کا علم نہیں تھایا وہ گورنرہائوس میں بیٹھ کر اپنے آئینی اختیارات سے تجاوز کر کے دوسروں کے اختیارات پر قبضہ کرنے کی امید لگائے بیٹھے تھے۔ کیا انھیں معلوم نہیں تھا کہ برطانیہ میں ملکۂ الزبتھ کے پاس کوئی انتظامی اختیارات نہیں ہوتے، ان کا عہدہ محض علامتی سربراہ کا ہوتا ہے۔ توپھر عام پاکستانی تارکینِ وطن کو تو چھوڑیے! ایک ایسا شخص جو برطانوی پارلیمنٹ کا رکن رہ چکا ہے،کیا آپ نے اس کی ذہنی ساخت میں کوئی تبدیلی دیکھی، آپ نے اس کا ذہن آئین وقانون کے سانچے میں ڈھلا ہوا دیکھا، انھوں نے ایک بے اختیار آئینی عہدے کوایک بار نہیں بلکہ دوبار بلاسوچے سمجھے قبول کرلیا،تو کیا وہ پاکستان میں اپنے آپ کو آئین وقانون کا مثالی نمونہ بناکر پیش کرنے کے لیے آئے تھے یا آئین وقانون کی دھجیاں اڑانے اور اختیارات سمیٹنے کے لیے آئے تھے۔

                ایک اورطالع آزما برطانوی شہری زلفی بخاری صاحب نے اسلام آباد میں فرقہ واریت کی آگ بھڑکانے کی کوشش کی، جس کی اکابرشیعہ علماء نے بھی مذمت کی اور اس سے براء ت کا اعلان کیا، ہم ان کے اس کردار کی تحسین کرتے ہیں۔پھر راولپنڈی رنگ روڈ میں اپنے مفاد کے لیے ردّوبدل میں بھی حصے دار بنے ، یہی وجہ ہے کہ اس اسکینڈل کی کوئی شفاف اورغیر جانبدارانہ تحقیق نہ ہوسکی، بلکہ علامتی طور پر ایک دو بیوروکریٹس کو نامزد کر کے تمام با اثر سیاست دانوں کو بچالیا گیا اور اب یہ معاملہ دب گیا ہے۔اسی طرح فیصل واوڈا صاحب نے قومی اسمبلی کی رکنیت کے لیے اپنی امیدواری کا فارم بھرتے ہوئے صریح کذب سے کام لیا ، آج چار سال ہوا چاہتے ہیں، نہ وہ اپنی صفائی پیش کرسکے اور نہ عدالتیں یا الیکشن کمیشن ان کے خلاف فیصلہ صادر کرسکے، سوعمل،سوچ اور رویوں کے اعتبار سے ان تارکین وطن اور مستقل پاکستانیوں میں کیا فرق ہے۔

                الغرض پاکستانی تارکینِ وطن کی پاکستانی سیاست میں سرمایہ کاری کی حکمت سمجھ سے بالا تر ہے، کیا پاکستان کے مستقل باشندے صرف محکومیت اور غلامی کے لیے پیدا ہوئے ہیں، یہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا استحقاق نہیں رکھتے، ان کی اجتماعی دانش اور شعور بانجھ ہے، انھیں سَمت کے تعیّن کے لیے ہر وقت اور ہر زمانے میں بیرونی سرپرست چاہییں ۔ آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک کے نامزد کردہ بیرونی معاشی معالجین نے ہی توپاکستانی معیشت کا بیڑا غرق کیا ہے، ان میں محمد شعیب، ایم ایم احمد،ڈاکٹرمحبوب الحق، معین قریشی، جاوید برکی، شوکت عزیز، عبدالحفیظ شیخ اور باقر رضا کے اسمائے گرامی نمایاں ہیں، شوکت ترین صاحب بھی انھی کی نقل مطابق اصل ہیں، ان معاشی ماہرین میں سے صرف ڈاکٹر محبوب الحق کی حکمتِ عملی قدرے بہتر تھی۔ آج بھی ہماری قومی قیادت تذبذب ، تشکیک ، شش وپنج اوربے یقینی کی کیفیت میں مبتلا ہے۔ماضی کی طرح دنیا ایک بار پھر دوکیمپوں میں تقسیم ہونے جارہی ہے ، ایک کی قیادت امریکہ کے ہاتھ میں ہے اور دوسرے کی چین اور روس کے ہاتھ میںہے۔ ہم اپنی کمزوریوں کے سبب واضح طور پر کسی ایک کیمپ میں شمولیت اختیار کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں ، دونوں کو لارا لپّا دے رہے ہیں ،یہی وجہ ہے کہ نہ ہمیں امریکہ اورچین میں سے کسی کا مکمل اعتماد حاصل ہے ،نہ ہم اپنے پاؤں پر کھڑے ہونے کی پوزیشن میں ہیں ، نہ ہم دنیا سے مل کر چل پارہے ہیں اور نہ دنیا سے کٹ کر جینے کا حوصلہ ہے۔ہمیں ہمیشہ دنیا کے سامنے اپنی صفائی پیش کرنی پڑتی ہے ، اس کے باوجود دنیا ہم پر اعتماد کرنے کے لیے تیار نہیں ہے۔ہمارا ریاستی اورحکومتی ڈھانچہ اتنا بھاری بھرکم ہوچکا ہے کہ اب ہماری معیشت اس کے بوجھ تلے سسکیاں لے رہی ہے ۔ پس ہماری گزارشات کا خلاصہ یہ ہے کہ اہلِ پاکستان کو اللہ کی نصرت اور اپنی صلاحیتوں پر بھروسا کرکے آزاد اور خود مختار پالیسی بنانی چاہیے،شاعرنے کہا ہے:

جنھیں حقیر سمجھ کر بجھادیا تم نے

یہی چراغ جلیں گے تو روشنی ہوگی

View : 72

9 thoughts on “پاکستانی تارکین وطن”

  1. May I simply say what a relief to uncover somebody that really understands what theyre discussing over the internet. You certainly know how to bring a problem to light and make it important. More and more people really need to check this out and understand this side of the story. I was surprised that youre not more popular because you certainly have the gift.

  2. I don’t need to tell you how important it is to optimize every step in your SEO pipeline. But unfortunately, it’s nearly impossible to cut out time or money when it comes to getting good content. At least that’s what I thought until I came across Article Forge… Built by a team of AI researchers from MIT, Carnegie Mellon, Harvard, Article Forge is an artificial intelligence (AI) powered content writer that uses deep learning models to write entire articles about any topic in less than 60 seconds. Their team trained AI models on millions of articles to teach Article Forge how to draw connections between topics so that each article it writes is relevant, interesting and useful. All their hard work means you just enter a few keywords and Article Forge will write a complete article from scratch making sure every thought flows naturally into the next, resulting in readable, high quality, and unique content. Put simply, this is a secret weapon for anyone who needs content. I get how impossible that sounds so you need to see how Article Forge writes a complete article in less than 60 seconds! order here.

  3. Use artificial intelligence to cut turnaround time, extend your budget, and create more high-quality content that Google and readers will love. How It Works? WordAi is extremely fast and intuitive. Just enter your content, click rewrite, and in a matter of seconds, WordAi will rewrite an entire piece of content for you. WordAi comes up with different ways to express the same ideas by rewriting every sentence from scratch. This not only removes duplicate content, it also makes the rewritten content read completely naturally. Scale Your Business Make your entire content production process 10x more efficient. Use AI to create more high-quality, unique content that impresses clients and engages readers, all without having to put in more hours Register here and get a bonus.

  4. I was extremely pleased to discover this page. I want to to thank you for ones time due to this wonderful read!! I definitely appreciated every part of it and I have you bookmarked to look at new information on your web site.

Leave a Comment

Your email address will not be published.