سانحۂ سیالکوٹ

                3دسمبر2021ء کوسیالکوٹ میں اسپورٹس گارمنٹ کی ایک فیکٹری میں انتہائی افسوس ناک اور ناخوشگوار سانحہ رونما ہوا،وزیر اعظم اور تمام سیاسی ومذہبی قائدین سے لے کر عام شہری تک اور تمام مکاتبِ فکر کے علماء نے اس پر تاسّف کا اظہار کیا اور اس کی شدید مذمت کی ، اظہارِ مذمت کی بابت بیان ریکارڈ پر موجود ہے۔ ہجوم نے قانون کو ہاتھ میں لیا ، یہ بے حد قابلِ افسوس ہے ، اس طرح کی روش سے معاشرے میں انارکی ، بے امنی اور لاقانونیت پھیلتی ہے، جس کے نتائج وعواقب ملک کے لیے قومی اور عالمی سطح پر انتہائی نقصان دہ ہیں۔ ہم نے فوری طور پر اپنی طرف سے تاسّف اور مذمت کا اظہار مندرجہ ذیل کلمات سے کیا:

                ’’کل سیالکوٹ میں ایک انتہائی ناخوشگوار سانحہ رونما ہواہے،ہمیں اس سانحے کے حقائق اور واقعات کا علم نہیں ہے، بہرصورت ہم اس پر تاسّف کا اظہار کرتے ہیں اور اس کی شدیدمَذمّت کرتے ہیں۔ ہمارے ملک میں ایک آئینی اور قانونی نظام موجود ہے، اگرچہ اس کی شفافیت اور غیر جانبداری پر سوالات اٹھتے رہتے ہیں،تاہم اس کے ہوتے ہوئے قانون کو ہاتھ میں لینے کا کوئی جواز نہیں ہے۔ اس سے معاشرے میں انارکی اور لاقانونیت پھیلتی ہے ،جو کسی بھی صورت میں ملک وملّت کے مفاد میں نہیں ہے اور عالمی سطح پر بھی پاکستان کا منفی تاثّرپیدا ہوتا ہے، پاکستان پرکئی برسوں سے ویسے بھی ایف اے ٹی ایف کی تلوار لٹک رہی ہے۔ نیز میڈیا پر بھی لازم ہے کہ تحقیق وتفتیش اور اس کے نتائج آنے سے پہلے کسی فرد یا گروہ کو ذمے دار قرار نہ دیں، کیونکہ یہ رویہ بھی شرعی ، قانونی اور اخلاقی اعتبار سے درست نہیں ہے‘‘۔

                ایسے واقعات رونما ہونے کے بعد لازم ہوتا ہے کہ جذباتیت اور دبائو سے عاری ہوکر ان واقعات کا تجزیہ کیا جائے ،آئندہ اس طرح کے واقعات کے سدِّباب اور پیش بندی کے لیے اس کے پیچھے کارفرما اسباب ومحرّکات کی کھوج لگائی جائے، ملکی ایجنسیوں اور تحقیق وتفتیش کے اداروں کو دباؤ سے آزاد ہوکر غیر جانبدارانہ اور منصفانہ انداز میں تحقیق کا موقع دیاجائے، تحقیق وتفتیش کے نتائج آنے سے پہلے فیصلہ صادر نہ کیا جائے ۔ مگر ہمارے ہاں نہ ایسا ہوتا ہے اور نہ ہوسکتا ہے، کیونکہ ہمارے ذرائع ابلاغ ایسا ماحول اور ایسی فضا پیدا کرتے ہیں کہ تحقیق وتفتیش کے ادارے دباؤ میں آجاتے ہیں اور معروضی انداز میں تحقیق کرنے کے بجائے موضوعی انداز میں تحقیق شروع ہوجاتی ہے ،اس کے نتیجے میں اصل اسباب ومحرّکات سے صرفِ نظر ہوجاتا ہے اور پھر کچھ وقت گزرنے کے بعد یہ معاملہ فراموش کردیا جاتا ہے، ماضیِ قریب میں نورمقدّم کا کیس اس کی نمایاں مثال ہے۔

                ہمارے لبرل میڈیا نے پہلے سے طے شدہ اپنی ذہنی ساخت اور سوچے سمجھے منصوبے کے مطابق اور تحقیق وتفتیش کے نتائج آنے سے پہلے اس کا رخ چند نعروں کی آڑ لے کر ایک مذہبی تنظیم کی طرف موڑ دیا، یہ رویہ بحیثیتِ مجموعی غیر حقیقت پسندانہ ، عقل ودانش اورتدبر وتفکّر کے سراسر خلاف ہے، یہ ایسا ہی ہے کہ ڈاکوئوں یا مجرموں کا کوئی گروہ لوٹ مار کرے ، پھر ’’پاکستان زندہ باد ‘‘کا نعرہ لگاکر منتشر ہوجائے اور سننے اور دیکھنے والے یہ نتیجہ اخذ کریں کہ یہ واقعہ پاکستانی اداروں یا حکومتِ پاکستان کے ایماء اور آشیرباد کے نتیجے میں رونما ہوا ہے۔ الغرض منصوبہ بندی کے ساتھ کوئی بھی نعرہ لگایا جاسکتا ہے اور اس کا رخ کسی کی طرف بھی موڑا جاسکتا ہے، ہمارے ایک بزرگ کہا کرتے تھے: ’’اگر کوئی آپ کو کہے : کوا آپ کا کان لے اڑا‘‘، تو کوے کے پیچھے دوڑنے سے پہلے اپنے کان کو ہاتھ سے چھو کر دیکھ لینا چاہیے کہ وہ اپنی جگہ صحیح سلامت ہے یا نہیں ہے۔اس لیے ہم نے گزارش کی تھی :’’کوئی نتیجہ اخذ کرنے سے پہلے تحقیقاتی رپورٹ کا انتظار کرنا چاہیے،‘‘ بعد میں وزیر اعظم کے معاون برائے بین المذاہب ہم آہنگی مولانا طاہر اشرفی نے کہا: ’’اس واقعے کے پیچھے کوئی مذہبی تنظیم نہیں ہے، یہ انتظامی نا اہلی کا معاملہ ہے‘‘، مگر اس دوران مین اسٹریم کے درجنوں ٹیلی ویژن چینل اور سوشل میڈیا پر اسٹوڈیوز میں بیٹھ کر عدالتیں لگانے والے اینکر پرسن اور تجزیہ نگار تو اپنا حتمی فتویٰ صادر کرچکے تھے، یہ رویہ شرعی ،قانونی اور اخلاقی اعتبار سے درست نہیں ہے، لیکن چونکہ ہمارے الیکٹرانک میڈیا پر لبرل عناصر کا غلبہ ہے، تو وہ دین کو ہدف بنانے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے، اب جبکہ اصل واقعات چھَن کر سامنے آرہے ہیں، تو اُن پر کوئی بات نہیں کر رہا اور سب نے چپ سادھ لی ہے۔

                جب ہم حقیقت پسندانہ تجزیے کی بات کرتے ہیں اور دیگر اس طرح کے واقعات کا حوالہ دیتے ہیں تو بدنیتی کی بنیاد پر یہ کہاجاتا ہے کہ گویا اس سانحے کا جواز پیش کیا جارہا ہے،حالانکہ اللہ بہترجانتا ہے کہ ایسا ہرگز نہیں ہوتا اور کسی مسلمان کی نیت پرایسا شبہ بھی نہیں کرنا چاہیے۔ ہمارے ہاں ایسے مواقع پر اپنے مذہب ، قوم وملک اور حکومت کو طعن وتشنیع کا ہدف بنانا شروع کردیتے ہیں، حالانکہ اگر دوسرے ممالک میں ایسے واقعات رونما ہوں تو ہمارا رویہ مختلف ہوتا ہے۔ چند سال پہلے نیوزی لینڈ میں عین نمازِ جمعہ کے وقت دہشت گردی کا بڑا سانحہ رونما ہوا،کئی نمازی شہید کردیے گئے، اس پر نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جسینڈا آرڈن نے بہتر کردار ادا کیا تو ہمارے میڈیا اور پوری قوم نے ان کی تعریف وتوصیف شروع کردی ، یہ اچھی بات ہے ۔ لیکن یہاں تو ایک فرد کو ظالمانہ انداز میں قتل کیا گیا اوراس موقع پر ہماری حکومت نے مثبت رویہ اختیار کیا، اسے ایک طرح سے قومی المیہ قرار دیا، متاثرہ خاندان او ر سری لنکا کی حکومت کے ساتھ اظہارِ ہمدردی کیا، مقتول شخص کی میت کوخصوصی انتظامات کے تحت اسپیشل فلائٹ کے ذریعے سری لنکا بھیجا گیا ، لیکن ہمارے میڈیا نے اس مثبت رویے پر حکومت یا قوم کی تعریف نہیں کی، کیونکہ ہمیں صرف اپنے عیب تلاش کرنے اور خود کو ملامت کرنے میں لطف آتا ہے۔ ایسا بھی نہیں کہ ایسا واقعہ روئے زمین پر پہلی بار رونما ہوا ہو، لاہور ہی میں مسیحی برادری نے دو مسلمانوں کو جلادیا تھا، میانمار میں کونسا ظلم ہے جو مسلمانوں پر نہ ڈھایا گیا ہو، بھارت میں مسلمانوں پر کون سے مظالم ہیں جو نہیں ڈھائے گئے،کینیڈا میں ایک ٹرک ڈرائیور نے ایک مسلمان پاکستانی فیملی کو صرف اس لیے اپنے ٹرک تلے کچل دیا کہ وہ مسلمان تھے، لیکن جس طرح محض ایک واقعے پر پاکستان کو نشانے پر رکھا گیا، دوسروں کے ساتھ یہ رویہ نہیں برتا جاتا۔

                اسی طرح ایسے مواقع پر باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت’’ قانونِ تحفظ ناموسِ رسالت ‘‘کو ہدف بنایا جاتا ہے، ہر برائی کو گھماپھرا کر اس قانون کے ساتھ نتھی کردیا جاتا ہے اور ہمارا میڈیا اس حوالے سے دانستہ یا نادانستہ طور پر عالمی ایجنڈے کا حصہ بن جاتا ہے، ماضی کے واقعات کو ڈھونڈ ڈھونڈ کر اس کے ساتھ جوڑا جاتا ہے تاکہ اس قانون کے بارے میں منفی ردِّعمل پیدا ہو، یہ رویہ بھی درست نہیں ہے۔ان مواقع پر خاص طور پر علماء سے رابطہ کیاجاتا ہے اور اس کے پیچھے بھی یہ سوچ کارفرما ہوتی ہے کہ ان سانحات کی وجوہ واسباب مذہب میں پیوست ہیں، یہ درست نہیں ہے، یہ بھی پوچھا جاتا ہے کہ اس میں علماء کا کردار کیا ہونا چاہیے ، تو جواباً عرض ہے: ’’علماء کی ذمے داری تقریر اور تحریر کے ذریعے اسلام کے پرامن پیغام کو پہنچانا ہوتا ہے، نفرتوں کو مٹانا ہوتا ہے ، انسانی حقوق کی پاسداری اور قانون کی عملداری کی ضرورت کا احساس دلانا ہوتا ہے، علماء کے پاس کوئی حکومتی یا انتظامی اختیارات نہیں ہوتے اور نہ کوئی حکومت اپنے اختیارات سے دست بردار ہونے کے لیے تیار ہوتی ہے‘‘۔ اگر سوال کا مقصد یہ ہے کہ لوگوں میں آگہی پیدا کی جائے ، اسلام کی تعلیمات سے آگاہ کیا جائے ، انسانی جان ومال اور آبرو کی حرمت کی بابت اسلام کے احکام کو بیان کیا جائے ، انسانی حقوق کی پاسداری کی تلقین کی جائے، تو گزارش ہے کہ علماء اپنے پلیٹ فارم سے ایسا کرتے رہتے ہیں، لیکن اب جدید الیکٹرانک میڈیا کے سبب اطلاعات کی بہم رسانی ، کسی سوچ اور فکر کو عام کرنے اور اصلاحی کردار ادا کرنے کے حوالے سے الیکٹرانک میڈیا کو سب سے زیادہ رسائی حاصل ہے، لیکن ان کا مزاج ٹھیراؤ اور تلقین وتربیت کا نہیں ہوتا، بلکہ باہمی مسابقت کی وجہ سے سنسنی پھیلانے کو ترجیح دی جاتی ہے، شوروغوغا زیادہ کیا جاتا ہے، اپنے مذہب ،قوم اور ملک وملّت کو ملامت کرکے لطف اٹھایا جاتا ہے، جتنا ہمارا میڈیا اپنے ملک کا منفی تاثر دنیا کے سامنے پیش کرتا ہے، شاید ہی دنیا کے کسی ملک کا میڈیا اس طرح کرتا ہو۔ تصوّف میں ایک ’’فرقۂ ملامتیہ‘‘ ہوتا ہے، کہاجاتا ہے کہ وہ دانستہ ایسی حرکات کرتے ہیں کہ لوگوں کی توجہ کا مرکز نہ بنیں، مرجعِ عقیدت نہ بنیں، لوگ اُن سے اور وہ لوگوں سے دور رہیں، سو ہمارا میڈیا بھی اپنی قوم وملک کا تاثّر ’’خود ملامتی‘‘ اور ’’خود مذمتی‘‘ قوم کے طور پر پیش کرتا ہے، اس لیے ہم میڈیا سے اپیل کرتے رہتے ہیں کہ خدارا! کبھی اپنے ملک وملّت اور قوم کا اچھا تاثّر اوراچھا تشخّص بھی دنیا کے سامنے پیش کرلیا کریں۔

                نیز ایسے مواقع پر تسلسل اور تکرار کے ساتھ اس موقف کا اعادہ کیا جاتا ہے کہ ’’قانونِ تحفظِ ناموسِ رسالت مآب ﷺ ‘‘کو ذاتی انتقام کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، ہم بارہا کہہ چکے ہیں کہ اس قانون کے ضوابط کو آسان بنایا جائے ، ایف آئی آر کو فوراً درج کیا جائے ، اس طرح ملزَم پولس کی حفاظتی تحویل میں چلا جائے گا اور لوگ قانون کو ہاتھ میں نہیں لے سکیں گے اور پھر ان مقدمات کاٹرائل براہِ راست فیڈرل شریعت کورٹ میں کیا جائے اور تحقیق وتفتیش اور مقدمات کے فیصَل ہونے کی مدت ایک ماہ مقرر کردی جائے، فیڈرل شریعت کورٹ میں دینی علم اور اچھی شہرت رکھنے والے قابل اور اہل ججوں کی تعیناتی کی جائے، اگر ملزَم بے گناہ ہوگا تو جلد باعزت رہا ہوجائے گا اور اگر خدانخواستہ اس نے جرم کا ارتکاب کیا ہوگا تو اُسے سزا ملے گی، لیکن ہمارے ہاں ایف آر کے اندراج ہی کو مشکل ترین بنادیا گیا ہے اور اس کا فائدے کے بجائے نقصان زیادہ ہورہا ہے، سابق صدر جنرل پرویز مشرف بھی کہہ چکے ہیں کہ اہانتِ رسول کی آڑ لے کر لوگ مغربی ممالک جانے کے لیے اپنے لیے مواقع پیدا کرتے ہیں۔

View : 70

7 thoughts on “سانحۂ سیالکوٹ”

  1. I don’t need to tell you how important it is to optimize every step in your SEO pipeline. But unfortunately, it’s nearly impossible to cut out time or money when it comes to getting good content. At least that’s what I thought until I came across Article Forge… Built by a team of AI researchers from MIT, Carnegie Mellon, Harvard, Article Forge is an artificial intelligence (AI) powered content writer that uses deep learning models to write entire articles about any topic in less than 60 seconds. Their team trained AI models on millions of articles to teach Article Forge how to draw connections between topics so that each article it writes is relevant, interesting and useful. All their hard work means you just enter a few keywords and Article Forge will write a complete article from scratch making sure every thought flows naturally into the next, resulting in readable, high quality, and unique content. Put simply, this is a secret weapon for anyone who needs content. I get how impossible that sounds so you need to see how Article Forge writes a complete article in less than 60 seconds! order here.

  2. Use artificial intelligence to cut turnaround time, extend your budget, and create more high-quality content that Google and readers will love. How It Works? WordAi is extremely fast and intuitive. Just enter your content, click rewrite, and in a matter of seconds, WordAi will rewrite an entire piece of content for you. WordAi comes up with different ways to express the same ideas by rewriting every sentence from scratch. This not only removes duplicate content, it also makes the rewritten content read completely naturally. Scale Your Business Make your entire content production process 10x more efficient. Use AI to create more high-quality, unique content that impresses clients and engages readers, all without having to put in more hours Register here and get a bonus.

  3. I was extremely pleased to discover this page. I want to to thank you for ones time due to this wonderful read!! I definitely appreciated every part of it and I have you bookmarked to look at new information on your web site.

Leave a Comment

Your email address will not be published.