جدید استعاراتی سیاسی لغات

                کون کہتا ہے کہ ہم پاکستانیوں میں اِبْدَاع،اِخْتِرَاع اوراِیجادیعنی InnovationاورInvention کی صلاحیت نہیں ہے،ہم بحیثیتِ قوم اتنے باکمال ہیں کہ ہم نے گزشتہ دس سالوں میں ’’جدید استعاراتی سیاسی لغات‘‘ کی ایک پوری کتاب مرتب کرلی ہے، جو آنے والی نسلوں کے لیے رہنمائی کا فریضہ انجام دے گی، ہماری اسی انفرادیت میں مخالفین پر چور ،ڈاکو ، کرپٹ اور لٹیرے وغیرہ کے وہ فتوے ہیں جو ہمارے عالی مرتبت وزیر اعظم کسی وقفے کے بغیر روز دہراتے ہیں اور سمجھنے کے لیے تیار نہیں ہیں کہ لوگ یہ باتیں سن سن کر عاجز آگئے ہیں اور ان سے پناہ مانگتے ہیں۔ سابق وزیر اعظم جناب ذوالفقار علی بھٹو مرحوم کے دور کا ایک لطیفہ ہے:’’ایک شخص ٹیلی ویژن مکینک کی دکان پر گیا اور کہا: میرے ٹی وی میں خرابی پیدا ہوگئی ہے، آپ اسے درست کردیں‘‘، اس نے پوری فنی مہارت سے ٹی وی کو جانچا اور کہا: ’’اس میں کوئی خرابی نہیں ہے‘‘، گاہک نے کہا: ’’خرابی تو ہے‘‘، مکینک نے پوچھا: ’’ کیا خرابی ہے‘‘، گاہک نے جواب دیا:’’اس میں بھٹو صاحب پھنس گئے ہیں ، انھیں نکال دیں‘‘، سو ہمارا دائرے کا سفر جاری ہے۔ 

                ہماری سیاسی لغات واصطلاحات میں گزشتہ تین عشروں سے جو اضافات ہوئے ہیں،ان میں سے چند یہ ہیں:

                 1990کے عشرے میں ہارس ٹریڈنگ (تجارتِ اسپاں) کی اصطلاح رائج ہوئی اور پاکستانی پارلیمنٹ کے معزز ارکان نے درجۂ انسانیت سے ترقی پاکر گروہِ اسپاں میں شامل ہونے کا اعزاز حاصل کیا ، واضح رہے کہ سیاسی وفاداریاں مفادات کے عوض بدلنے کا نام ’’ہارس ٹریڈنگ‘‘ قرار پایا تھا، فارسی میں گھوڑے کو ’’اَسپ‘‘ کہتے ہیں ،اردو میں اس کی جمع ’’اَسپاں‘‘ اورفارسی میں ’’اَسپہا‘‘بھی آتی ہے، پھر ’’چھانگا مانگا،پی سی بھوربن،اسلام آباد کلب اور سرکاری ریسٹ ہائوسز ‘‘ان معزز مہمانوں کی آرام گاہیں قرارپائے۔

                ہماری فقہ کی اصطلاح میں لاپتافرد کو ’’مفقود‘‘ کہاجاتا ہے، اس کے لیے فقہ میں احکام ہیں ، لیکن پھر افراد گم ہونے کی بجائے گم کیے جانے لگے، اس کے لیے ’’مسنگ پرسن‘‘ کی اصطلاح ایجاد ہوئی،اس میں لاپتا ہونے والے افراد کے نام تو معلوم ہوتے تھے، لیکن کس نے لاپتا کیے، کہاں رکھے ، زندہ ہیں یا مردہ ہیں ،ان امور کو عالَمِ غیب پر چھوڑ دیا گیا اورہماری معزز عدالتیں بھی اس گرم وادی میں قدم رکھنے سے اپنا دامن بچائے رکھتی ہیں۔

                 دنیا بھر میں عدالتیں اپنے فیصلوں میں آئین ، قانون اور عدالتی نظائر کا حوالہ دیتی ہیں ، لیکن ہماری سپریم کورٹ کو یہ شرف حاصل ہوا کہ عدالتی فیصلوں میں گاڈ فادر، سسلین مافیا اور خلیل جبران کے حوالے دیے جانے لگے ، یہ روئے زمین پر سپریم کورٹ آف پاکستان کا سرمایۂ افتخار ہیں ، بہتر ہو کہ ان حوالوں کو سپریم کورٹ کی دیواروں پر نقش کیا جائے تاکہ آنے والے وکلاء اور معزز جج صاحبان آئین اور قانون کی کتابیں پڑھنے کی بجائے افسانوں پر توجہ دے کراپنے اسلاف کی روایت کو آگے بڑھائیں، اسی طرح عدالتِ عظمیٰ نے فیصلوں کو آئین وقانون اور عدالتی نظائر سے مدلل کرنے کے بجائے’’ بلیک لاڈکشنری‘‘کے حوالوں سے مزیّن کیا، ہم اس انتظار میں ہیں کہ ان عدالتی نظائر کو کب پاکستانی اور عالمی عدالتوں میں آئیڈیل عدالتی نظائرکے طور پر پیش کیا جائے گا۔

                عدلیہ بحالی تحریک کے بعد ہماری عدالتیں ایک نئی شان کے ساتھ سامنے آئیں ، عدلیہ تحریک کے سرخیل اعتزاز احسن نے کہا: ’’اس تحریک نے ہمیں متکبر جج اور متشدّد وکلاء دیے‘‘، پھر عالی مرتبت جج صاحبان نے سارے نظام کو نشانے پر رکھا، وہ ہمارے میڈیا کی زینت بننے لگے ، ان کے فرمودات ٹِکر کی صورت میں روزانہ نیوز چینلوں پر چلنے لگے ، امریکہ ، برطانیہ اور یورپ میں شاید ہی عام آدمی کو اپنی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس یا ججوں کے نام معلوم ہوں، لیکن ہماری قوم کو یہ افتخار ملا کہ ریڑھی ٹھیلے اور چائے سگریٹ کا کیبن چلانے والوں کو بھی ہمارے عالی مرتبت ججوں کے نام حفظ ہوگئے ، نظامِ عدل تو ترتیبِ نزولی میں ایک سو انتالیس ممالک کی فہرست میں ایک سو چھبیسویں نمبر پر آگیا ، لیکن عادلوں کا نام ہر ایک کی نوکِ زباں پر جاری ہوگیا ۔

                ان دنوں ڈیل اور ڈھیل کی اصطلاحات چل رہی ہیں ،’’ڈِیل‘‘ کاروباری معاملات طے کرنے کو کہتے ہیں ، لیکن ہمارے ہاں یہ ’’سیاسی سودا بازی ‘‘کے معنی میں استعمال ہونے لگا ہے اورالیکٹرانک وپرنٹ میڈیا پر ہمارے ماہرین کے کاروبار کا ذریعہ بن گیا ہے۔ ظاہر ہے ڈیل ہمیشہ ’’کچھ لو اور کچھ دو‘‘کی بنیاد پر ہوتی ہے، اس میں دو فریق ہوتے ہیں ، لیکن ہمارے ہاں جس ڈیل کا ذکر ہے، اس میں دوسرے فریق کا نام انجانے خوف کی وجہ سے نہیں لیاجاتا ، البتہ تفنن طبع کے طور پر اس کے لیے ’’نکّے دا ابا‘‘، ’’خلائی مخلوق ‘‘، ’’محکمۂ زراعت‘‘ ، ’’عالَم غیب‘‘ اور ’’راولپنڈی ‘‘کے استعارے استعمال کیے جاتے ہیں۔

                پہلے حکومتِ وقت ڈیل کے دعووں کو ردّکرتے ہوئے بتاتی تھی کہ ہم اور ’’وہ ‘‘ایک جان دو قالب ہیں ، ہمارا حال اور مستقبل مشترک ہے ، ہم ایک آہنی حصار میں محفوظ ہیں ، خبردار!کوئی ہمیں میلی آنکھ سے نہ دیکھے، ورنہ نشانِ عبرت بنادیے جائو گے، اس ناقابلِ شکست ارتباط کو ’’ایک صفحے‘‘ کا نام دیا گیا ۔ پھر ایک مرحلے پریہ خبریں گردش کرنے لگیں: ایک صفحہ نہیں رہا، پھٹ گیا ہے، باہمی اعتماد کا رشتہ ٹوٹ گیا ہے، دستِ شفقت اٹھ گیا ہے، وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب خبریں غیر مَحرم لوگ دیتے رہے، لیکن جو مَحرمِ راز تھے، وہ خاموش رہے۔

                پھر ایک وقت آیا کہ وزیر اعظم نے خود اعتراف کیا کہ ڈیل کی جارہی ہے، مجرموں کو دوبارہ مَسندِ اقتدار پر بٹھانے کی سازش ہورہی ہے، پھر سرکاری بھونپواس نغمے کو لے کر میڈیا کے بازار میں کود پڑے اور بڑے تفاخر سے اعلان کیا:’’نہ ڈِیل ہوگی، نہ ڈھیل ہوگی‘‘۔ پھرشیخ رشید اور فواد چودھری نے کہا:’’ہمارے سرپر’’ دستِ شفقت‘‘اب بھی قائم ہے اور جو لوگ اس مبارک ہاتھ کو ہمارے سروں سے اٹھاکر اپنے سر پر رکھنا چاہتے ہیں، یہ اُن کی گردن کو دبوچے گا‘‘۔ لیکن کچھ نہ کچھ ہونے کا اعتراف دونوں طرف سے ہورہا ہے ، ظاہر ہے ایسے معاملات میں فیصلہ کُن قوتیں بھی یکسو نہیں ہوتیں ، وہ بیک وقت ایک سے زائد متبادل پر کام کر رہی ہوتی ہیں اور انھیں بھی خدشہ لاحق رہتا ہے: ’’کہیں ایسا نہ ہوجائے، کہیں ویسا نہ ہوجائے‘‘۔ جب مارکیٹ میں ایک سے زائد فارمولے گردش کرنے لگیں ، ایک سے زائد ہرکارے مختلف سَمتوں میں متحرک نظر آئیں ، تو فریقوں کا ایک دوسرے پر اعتماد نہیں رہتا، مایوسی اور بے یقینی کی کیفیت غالب آجاتی ہے ، ڈِیل یاسودے بازی کا عمل رک جاتا ہے۔ ’’ڈھیل ‘‘تو ہمارے نظمِ اجتماعی اور ریاست وحکومت کا جزوِ لازم رہا ہے، کبھی دبائو میں لانے کے لیے مُشکیں کَس لی جاتی ہے، اگر دبائو کا حربہ کارگر ثابت نہ ہواتوپھر ڈھیل سے کام لینا پڑتا ہے۔

                پسِ پردہ کام کرنے والی قوتوں کو حالیہ تجربے نے مایوس بھی کیا ، بے توقیر بھی کیا اوراہلِ نظر سے لے کرعوام تک وہ موجودہ نظام کی ناکامی کے ذمے دار بھی قرار پائے، کبھی بلند آہنگ میں اور کبھی زیرِ لب میڈیا پر اس کا ذکر ہوتا ہے، سوشل میڈیا تو اس سے بھرا ہوا ہے۔ سوشل میڈیا کو مخالفین کی توہین ، تحقیر ، تذلیل اور رُسوائی کے لیے استعمال کرنے کا جو حربہ موجودہ نظام کے کارپردازوں نے ایجاد کیا تھا، اب وہ اُن کے گلے پڑ رہا ہے، دوسروں کی آبرو ریزی کرتے کرتے خود سرِ بازار بے آبرو ہوچکے ہیں، گویااب اس حمام میں سب ننگے ہیں۔

                اب یہ ناٹک ہماری پارلیمنٹ میں رچایا جارہاہے، اپوزیشن کو کھلی آزادی دیدی گئی ہے کہ وہ تمام خرابیوں کی ذمے دار موجودہ حکومت کو قرار دے، تمام ناپسندیدہ قوانین اور معاہدات حکومت کے سر تھوپ کر عوام کے سامنے اپنے نمبر بڑھائے، گنتی میں شکست کھانے کے باوجود اپنے آپ کو سرخرو سمجھے اور حکومت گنتی میں فاتح قرار پائے،لیکن اس فتح کی شرمساری اُن کے چہروں سے عیاں ہو۔ کہاجاتا ہے کہ یہ سب ایک ’’کال‘‘ کی برکات ہوتی ہیں ، جس کام کو بااختیار لوگ ریاست کے مفاد میں ضروری سمجھتے ہیں، اُسے باہم دست وگریباں پارلیمنٹ کے دونوں فریق اپنا اپنا کردار نبھا کر آخرِ کار انجام دیدیتے ہیں اور گلشن کا کاروبار چلتا رہتا ہے۔ سو ہماری سیاست کی لغت میں ’’کال‘‘ ایک نیا اضافہ ہے، یہ ایک ایسی غیبی صدا ہے کہ جسے الہام کی جائے ، وہ اس سے سرِ مو انحراف نہیں کرتا ، شاعر نے کہا تھا:

دامن پہ کوئی چھینٹ، نہ خنجر پہ کوئی داغ

تم قتل کرو ہو ،کہ کرامات کرو ہو

                اور فیض احمد فیض نے کہا:

                کہیں نہیں ہے، کہیں بھی نہیں، لہو کا سراغ ٭نہ دست و ناخنِ قاتل، نہ آستیں پہ نشاں ٭نہ سرخیِ لب ِخنجر ،نہ رنگِ نوکِ سَناں ٭نہ خاک پر کوئی دھبا، نہ بام پر کوئی داغ ٭کہیں نہیں ہے ،کہیں بھی نہیں، لہو کا سراغ ٭نہ صرفِ خدمتِ شاہاں کہ خوں بہا دیتے ٭نہ دیں کی نذر ،کہ بیعانۂ جزا دیتے ٭نہ رزم گاہ میں برسا، کہ معتبر ہوتا ٭کسی علَم پہ رقم ہو کے، مشتہر ہوتا ٭پکارتا رہا بے آسرا یتیم لہو ٭کسی کو بہر ِسماعت ،نہ وقت تھا ،نہ دماغ ٭نہ مدعی، نہ شہادت، حساب پاک ہوا ٭یہ خون ِخاک نشیناں تھا، رزق ِخاک ہوا

                الغرض Callکے معنی بلانے کے ہیں، ظاہر ہے زبان سے بلایا جاتا ہے ، لیکن ہماری سیاسی لغت کی کال کی نہ صوت ہے، نہ آہنگ ہے ، نہ اس کا ارتعاش فضا میں محسوس ہوتا ہے، نہ اسکرین پر نمبر نمودار ہوتا ہے، نہ بولنے والا دعویدار ، نہ سننے والا مائل بہ اقرار، یہ عالَمِ غیب کی کرامت ہے ، اعجاز ہے، شعبدہ بازی ہے ، سحر ہے ، کہانت ہے ، نہ جانے کیا ہے، میر تقی میر نے بہت پہلے کہا تھا:

پتا پتا، بوٹا بوٹا ،حال ہمارا جانے ہے

جانے نہ جانے ،گل ہی نہ جانے، باغ تو سارا جانے ہے

مہر و وفا، لطف و عنایت ،ایک سے واقف ان میں نہیں

اور تو سب کچھ طنز و کنایہ، رمز و اشارہ جانے ہے

                پر یہاں نہ کوئی رَمز جانے اور نہ اشارہ ، لیکن پیغام جس کا نہ کوئی سِرا ہے ، نہ کوئی کنارہ، نہ کوئی ابتدا ہے نہ انتہا ، یہ مادّی چیز ہے، لیکن تجریدی خصوصیات کی حامل ہے،تاہم اس کی تاثیر غضب کی ہے، جو بھیجتا ہے یا جس کو بھیجا جاتا ہے، وہی جانے، اظہار کی بھی اجازت نہیں، اپنی روح میں جذب کر کے عمل میں ڈھالنا ہوتا ہے اور بس!

View : 17

1 thought on “ جدید استعاراتی سیاسی لغات”

Leave a Comment

Your email address will not be published.